Absence of Witness Protection is a Threat to Fair Trial as Envisaged Under the Constitution of Pakistan, 1973

Authors

  • Atif Uddin School of Law ,University of Karachi
  • Dr.Liaquat Ali Law Department Government of Sindh

DOI:

https://doi.org/10.46568/pjass.v11i2.453

Keywords:

Fair trial, Witness protection, Witness protection Law, Criminal Justice System, Witness Anonymity Order, Constitution

Abstract

 

ABSTRACT

The purpose of this research is to analyze the causes of non-implementation of witness protection laws in Pakistan and their effects on the right of a fair trial. The key elements in a criminal trial are witnesses and their testimonies, which establish the guilt of the accused. Pakistan follows the adversarial system of trial, which is based on two basic principles; firstly that the burden of proof lies on the prosecution and secondly, that the accused is presumed to be innocent until proven guilty. Witness protection is essential for a fair trial. In terms of Article 10A of the Constitution, 1973, the right of a fair trial is a indisputable and  inalienable right of every inhabitant of Pakistan including the victims and witnesses. Protecting witnesses and victims is an obligation of the State. The process of investigation and prosecution of crimes, serious or not, be subject to mainly on the evidence and authentication of witnesses. Hence, witnesses are the chief ingredient

 of the fruitful Administration of the criminal justice system (CJS) in Pakistan. General principles of evidence are contained in the Qanoon-e-Shahdat Order, 1984 (‘QSO-1984’) however, on the matter of witness protection in Pakistan, for the first time complete legislation was introduced at the federal and provincial levels (except Khyber Pakhtunkhwa). The  outcome of the reluctant approach of the public at large is that the suspect , every time able to free from a criminal charge  and the criminal administration of justice fails.  Hence, it is a denial of due process and violation of the essential entitlement to a fair trial of the victim.

خلاصہ

اس تحقیق کا مقصد پاکستان میں گواہوں کے تحفظ کے قوانین کے نفاذ کی وجوہات اور منصفانہ مقدمے کی سماعت کے حق پر ان کے اثرات کا تجزیہ کرنا ہے۔ مجرمانہ مقدمے کی سماعت کے اہم عنصر گواہ اور ان کی شہادتیں ہیں ، جو ملزم کا جرم ثابت کرتے ہیں۔ پاکستان آزمائشی نظام کی پیروی کرتا ہے ، جو دو بنیادی اصولوں پر مبنی ہے۔ پہلا یہ کہ ثبوت کا بوجھ استغاثہ پر پڑتا ہے اور دوسرا یہ کہ قصوروار ثابت ہونے تک ملزم کو بے قصور سمجھا جاتا ہے۔ منصفانہ آزمائش کے لئے گواہوں کا تحفظ ضروری ہے۔ آئین کے آرٹیکل 10 اے کے تحت 1973 میں ، منصفانہ آزمائش کا حق متاثرین اور گواہوں سمیت پاکستان کے ہر شہری کا ایک بنیادی ، ناگزیر حق ہے۔ گواہوں اور متاثرین کی حفاظت کرنا ریاست کی ذمہ داری ہے۔ سنگین ہے یا نہیں ، جرائم کی تحقیقات اور ان کے خلاف قانونی کارروائی کا عمل بنیادی طور پر گواہوں کے ثبوت اور توثیق پر منحصر ہے۔ لہذا ، گواہ پاکستان میں فوجداری نظام کے ثمر آور انتظامیہ کا سنگ بنیاد ہیں۔ ثبوت کے عمومی اصول قونونِ شہادت آرڈر ، 1984 میں موجود ہیں ، تاہم ، پاکستان میں گواہوں کے تحفظ کے معاملے پر ، پہلی بار وفاقی اور صوبائی سطح پر (خیبر پختونخوا کے علاوہ) مکمل قانون سازی کی گئی۔ بڑے پیمانے پر عوام سے ہچکچاتے ہوئے اندازہ لگانے کا نتیجہ یہ ہے کہ ہر بار مجرم ، مجرمانہ الزامات سے آزاد ہونے اور انصاف کی مجرمانہ انتظامیہ ناکام ہوجاتا ہے۔ لہذا ، یہ انصاف کی تردید اور مقتول کے منصفانہ مقدمے کے لازمی حق کی خلاف ورزی ہے۔

کلیدی الفاظ

منصفانہ ٹرائل ، گواہوں سے تحفظ ، گواہوں کے تحفظ کا قانون ، فوجداری انصاف کا نظام ، گواہ گمنامی کا حکم ، آئین۔

 

Downloads

Published

2020-09-08

How to Cite

Uddin, A., & Ali, L. . (2020). Absence of Witness Protection is a Threat to Fair Trial as Envisaged Under the Constitution of Pakistan, 1973. Pakistan Journal of Applied Social Sciences, 11(2), 59–78. https://doi.org/10.46568/pjass.v11i2.453

Issue

Section

Articles